الفاظ

الفاظ جیتے ہیں الفاظ کی بھی عمر ہوتی ہے الفاظ بھی پروان چڑھتے ہیں الفاظ اپنے وقت سے پہلے نہیں مرتے انسان مرتے ہیں الفاظ جیتے ہیں قرطاس پر جو لفظ دکھتے ہیں بارش میں بھیگیں تو اصل میں بھیگتا قرطاس ہے الفاظ گویہ با ہنر تیراک ہوتے ہوں ہمیشہ بچ نکلتے ہیں لگے گر آگ جو قرطاس کو قرطاس جلتا ہے الفاظ جیسے موم ہوتے ہوں پگھل کر پھر سے جمتے ہیں کوئ تہوار اتا ہے تو ان الفاظ میں جو حرف رہتے ہیں لہجے پہنتے ہیں سنگھار کرتے ہیں الفاظ بھی…Read more …

Kintsugi

Every heart is fragile Every heart breaks Every heart mends itself To break in different place You have to break your heart For golden dust to glue And embellish your scars For them to shine anew As hiding is a toil And you'd grow weary Of lying to yourself That you were never teary And why do you hide? The story of your strength That your cracks can tell Let it show, it mends There will always be A yoshimasa for you Who wants you as you are Scarred, pale and blue *Kintsugi or Kintsukuroi is the Japanese…Read more …

Blue Garnet

Once I found a blue garnet  A little raw and a little rough  I cleaned it up and gave it a cut then a little more and a little more until I had no blue garnet I wish I had a blue garnet A little raw and a little rough Arqum 8/2/2016Read more …

“نعرہِ حرب”

آج سنا ہے پھر سےدل بےباک کے آنگن میںاس آنگن میں جو مدت سے پڑا ہے خالیبے جان، ناکشامہض گلوں کے خواب لئےفقط وعدہ بہار لئےسنسان، زہر آلود، تشنہ، بنجرپھر کود کے آئے ہیں جہنم کی فصیلوں سےہانپتے، غراتے ہوئے، کوڑھ شدہنار اگلتے ہوے افتاد کے پاگل کتےاور ضبط کی تیغوں پے قدیم لہو کے دھبےزنگ کی پوشش سے ڈھکے تھے جو، نکھر آئے ہیںورنہ پہلے بھی تو ناچیز غموں کے بونےاپنی جنجال بھری چال میں آتے ہی رہے ہیںپر اتنا اچھل پائے ہیں کے اندر آئیں؟  اب مگر ضبط کی تیغوں کو زرا دھونا ہوگا…Read more …

Valor

Be wary of a certain kind of valor, for it is in the trance of having suppressed the most feral of urges to sin, is when men are most susceptible to fall for the greatest of hitherto benign temptations.Read more …

تمہیدِ معترضہ

وہ نیلگوں رات اور اس رات کا مہتابِ زخیم وہ تاروں کے گروہوں کا طلسمِ روشن ،اور جھیل کے پانی میں منعکس   لاریب فلک جھومتی لہروں کا سحر اور ان پر تیرتے شیشوں کے کنول رات کے جھینگر ،اور شاد نواؤں کا فسوں نکھرے ہوئے رستے، شفاف زمین ہر در پے دمکتے ہوئے زرتاب چراغ نورِ مخمل کا فروغ، ہر گاہ پے پیہم، محتوم رات تھی یوں کے پرستان میں جشن ہو جیسے اس رات کی تاب ایسی کے آنکھیں نہ جلیں نہ بادِ سبک تلخ کے جو سرد لگے دور جنگل کی…Read more …

خدا کے حضور

میں ٹوٹا پھوٹا بندا ہوںاور میرا سفینہ بھی خستہتو قادر مطلق کن کہ دےگرداب سے نکلوں پار لگوں ہو دامن جسکا خاکسترپیوند تکلم کب ڈھانپےجو من میں اتروں خاک دکھےجو باہر نکلوں خاک لگوں تو بھید دلوں کے سب جانےتو سامع بھی تو ناظر بھیاب آنکھ کے آنسو سوکھ چکےتو پاک کرے تو پاک لگوں میں گام بڑھا تو آگے بڑھتو اپنا وعدا ایفا کراب ہاتھ پکڑ کے ایسا ہوتو آپ لگے میں آپ لگوں Arqum 28/1/2016 (Haram, Makkah)  Read more …

ایک قطرہ

قطب شمالی کے اک جزیرے پر جو چند ہفتوں قبل تک برفیلے دشت سے زیادہ کچھ نہ تھا آج جھرنوں بہاروں کا آخری دن ہے برف مہلک سرطان کی مانند فضا کی خشک شریانوں میں پھیلنے لگی ہے آج روشنی، حرارت، نشاط و زندگی   آج سورج کی آخری شام ہے اور آگے اک سرد، طویل ہجر اک مدھم ہوتی نزار کرن ایک منجمد قطرے کو پگھلاتی ہے جو ایک جھاڑی کے پتے سے کودتا ہے اور سورج چھپ جاتا ہے اور وہ قطرہ گرنے سے پہلے ہی پھر سے برف بن جاتا ہے…Read more …

Epiphany I

All adversity that stalls my journey and sucks me down into despair I thought about it, the other day.. It occurred to me as an epiphany If I were to write, my life's accounts the troubles that I've  had so far All my nightmares that came true, and every time I was left in blue all of that, If I'm not redundant wouldn't take more than a paragraph :) Arqum 22/1/2016Read more …