Ghazal I

ہم بھی تو تھے درخشاں جو نہ جارِ یار ہوتے
ہم بھی بہت گراں تھے جو نہ تار تار ہوتے

ہم بھی بہت تھے رنگیں ہم بھی بہت تھے نادر
ہم بھی کِھلے ہی رہتے جو نہ ریگزار ہوتے

سرِ کوئے یار نکلے شبِ بے قمر سے ہو کر
غمِ دل چراغ کرتے جو اگر شرار ہوتے

ہم کو بھی تھا مکمل منزل پے اپنی ایماں
ہم نہ اگر اسیرِ کفِ پائے یار ہوتے

اپنے جہاں کی اپنی اک کہکشاں بناتے
تارے تیری جبیں کے جو اگر ادھار ہوتے

ہم بھی اگر سنبھلتے ہم کیوں نہ مسکراتے
ہم خار خار گنتے جو اگر شمار ہوتے

کوئ کھوجتا خدا کو،  کوئ خدا کو کوسے
ہم بھی نہ گڑگڑاتے جو نہ بے قرار ہوتے

 Neighbour in Arabic =جارِ

 


I’m done with this writing thing for now. It has lost its therapeutic value. And who am I kidding, oh one day it may make a difference. lol yea. I have no motivation left.

(212)

Share it :)Share on FacebookTweet about this on TwitterGoogle+share on TumblrPin on PinterestShare on LinkedInEmail to someone

Comments

comments

This article has 3 comments

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *