A Sunset

Chrome trees and stainless steel blades of grass crimson drops slither on the edges And petals lay rotting The golden sun hangs on the horizon of a satin sky and blinds an infant tulip grown in a mass of copper It's youthful veins yearn for water and suck the acid from down below It observes as it withers A large coiled cord at the back of the sun and a few civilized men lethargically rotating a dial and the sun starts to set   Arqum 6/12/2016  Read more …

تمام ہم اور تمام تم

  وہ ستارہ دور گردوں میں، کہکشاؤں میں ان گنت نور کے زرّے خلا میں تیرتے جائیں بزرگ سیارے اور انکے اپنے قمر مگر وہ سیارے کسی اور کا طواف کریں کئی عظیم سورج بھڑک بھڑک کے بجھ بھی گئے اور وہ انجمِ نیّر بھٹک رہا ہے دور لمحوں میں وقت سے آگے وہ انجمِ ششدر خود کو تکتا ہے مڑ مڑ کر وہ انجمِ ماضی ... اب تو بجھ چکا ہوگا کہ پہنچتی ہیں زمانوں میں حادثوں کی پرچھائیاں مگر روشنی کے سال لگتے ہیں کتنا رخشاں تھا وہ انجم کہ جو…Read more …
The Crow (a story of revolution)

The Crow (a story of revolution)

This has been a long time coming. It is more of a practice in storytelling than anything else. The idea lingered with me for a very long time and I can't surmise if I have been able to execute it properly or not. Your feedback will certainly put things in perspective. It is the final "draft" as far as the content is concerned. There may be mistakes in language and punctuation. That's where you fellows come into play. If you like what I do, please leave a comment. You can discuss the themes…Read more …

ضرب

وقت کے خستہ ہوئے کاغز پے رقم ہیں بل کھاتے مداروں میں جڑے حرف و اشارات اور خوب سے جینے کے قواعد سارے الفاظ کی لمبی سی قطاریں ہیں نمایاں جو گھوم کے مرکز کی طرف بھاگ رہی ہیں بیباک ہوا پھرتا ہے ہندسوں کا فشار اک آگ کناروں پے تمنا کی لگی ہے جو ازل سے مانگے ہے ابد تک کا دوام اس عقل کے گرداب سے ہے دور حرارت جو برف میں یخبستہ گلابوں کی دعا ہے کس طور چلے دور، نکہت کا چمن میں ہر گل تو ہے سہما ہوا باد خزاں…Read more …

امتنان

،آج کی رات اس طرح لفظ اترتے ہیں نگارش میں جس طرح کاسہ وقت کی سطح بلب پر الجھے ہوئے لمحے اتریں انہی الجھے ہوئے لمحوں میں گزاری ہے عمر نہ کسی دشت پے برسے نہ کسی سنگ پے ٹپکے ہوں مسلسل، پیہم ..چھلکے ہوئے جاموں کے تلے کون ٹھرتا ہے کس نے چاہا ہے کہ زات کا دامن بھیگے؟ کون پڑھتا ہے چھلکتے ہوئے لفظوں کی نظم؟ ،آج کی رات اس نظم کو کر دیتے ہیں اس آخری قاری کی بصارت کی نظر جس نے لفظوں کو میری زات کے بحروں میں…Read more …

Prosaic

I'm unable to write, the poem that I've become A poem of lost stanzas.. My limbs are torn and put back together Like syllables out of place I present no art I have no meaning I sooth no senses; I am prosaic but I can't be prose I can't be prose.. Arqum 23/2/2016Read more …

الفاظ

الفاظ جیتے ہیں الفاظ کی بھی عمر ہوتی ہے الفاظ بھی پروان چڑھتے ہیں الفاظ اپنے وقت سے پہلے نہیں مرتے انسان مرتے ہیں الفاظ جیتے ہیں قرطاس پر جو لفظ دکھتے ہیں بارش میں بھیگیں تو اصل میں بھیگتا قرطاس ہے الفاظ گویہ با ہنر تیراک ہوتے ہوں ہمیشہ بچ نکلتے ہیں لگے گر آگ جو قرطاس کو قرطاس جلتا ہے الفاظ جیسے موم ہوتے ہوں پگھل کر پھر سے جمتے ہیں کوئ تہوار اتا ہے تو ان الفاظ میں جو حرف رہتے ہیں لہجے پہنتے ہیں سنگھار کرتے ہیں الفاظ بھی…Read more …

Kintsugi

Every heart is fragile Every heart breaks Every heart mends itself To break in different place You have to break your heart For golden dust to glue And embellish your scars For them to shine anew As hiding is a toil And you'd grow weary Of lying to yourself That you were never teary And why do you hide? The story of your strength That your cracks can tell Let it show, it mends There will always be A yoshimasa for you Who wants you as you are Scarred, pale and blue *Kintsugi or Kintsukuroi is the Japanese…Read more …