Soliloquy I

Soliloquy I

Am I the mountain Or part of it? like a stone like a tiny mountain in itself unstable, but resolute and reality, a kick away.. Or perhaps I am the fire.. or in it? like a spark like a tiny inferno in itself and my incandescence, contains infinities..  Or maybe, I am the ocean.. Or in it? like a droplet Like a tiny ocean in itself Being both the wave and that, what is swept away Am I the desert Or in it? like a grain Like a tiny desert in itself and…Read more …

Ghazal II

پھر ہوا ہے لالچی آدم فریب عصر میںپھر ہے راضی خسر پے میوے عدن کے دیکھ کر   ہو کوئ جو سوختہ، توعین ممکن ہے کہ وہطور ہو آتش زدہ اس کی تجلی دیکھ کر لو مسافر چل دیا ،پھر خواب کی گٹھڑی لئےاس دیار وہم سے پنہاں حقیقت دیکھ کر   بات جو مستور تھی اور راز جو رہنے کی تھیروزِ روشن ہو گئی، میری شرافت دیکھ کر   عشق پھر گوہر ہوا یوں رات گویا ہو صدفعقل پتھر رہ گئی دن کے اجالے دیکھ کر       Arqum 9/1/2016Read more …

Anomaly

I was an autumn leaf   I was born in it   An anomaly, a glitch   I was born old,   pale and dry   My sinews were arid    in my prime   My dalliance with spring    never began   Though I held on..   but not for long   I was a leaf in disbelief   But when I fell   I flew into the sky Arqum 7/1/2016Read more …

تخفیف و منطق اور انکا حشر

وہ لمحہ جہاں پر طلب نہ رہے شرارے میں کوئ رمق نہ رہے ہو دھنک بلبلے کی، فریب نظر ہو چمن میں مہک، کیمیائ اثر ہو حسن تتلیوں کا محض ارتقاء اور پانی ندی کا لگے شور سا سارے پربت کبھی تھے تحت بحر کے؟ بیچ اپنی زمیں تھی کسی لہر کے؟ پھر سے ٹوٹینگے ہم چند ذرات میں؟ ..اور شائد جڑیں پھر بخارات میں کیا ہے وجدان، لذت، حیات و اجل چند خلیوں کے آپس کا رد عمل؟         میری ساری تخفیف، منطق میرا ایک پل میں تیری زلف…Read more …

سچ اور جھوٹ

رات کے اندھیرے میں سچ جب نکلتے ہیں خوف کے خیاباں میں نشتر و علم تھامے خون رنگ آنکھوں میں انتقام ہوتا ہے ہم چاپ سنتے ہیں سرد فرش پر لیٹے قفل توڑ دیتے ہیں باب کھول دیتے ہیں ہم وقت کے مجرم جھوٹ اوڑھ لیتے ہیں Arqum 6/1/2016Read more …

By Idrees Azad – افرودیتی کے مندر پر

  ایتھِنا!  میں ترا سقراط جو پی پی کے پَلا زہر کے جام ایتھِنا! یہ میرے پیالے میں جو تھوڑا سا بچا ہے یہ جُنُوں ہے تو قبا اب بھی سلامت کیوں ہے؟ اور نہیں ہے ۔۔۔ تو قیامت کیوں ہے؟ اے کہ تُو پارس ِ آشفتہ!  شبِ ضبط کے چاند! اے شب ِ ضبط کے چاند! اپنی کرنوں کو اُچھال اور مرے غار ِ فلاطون کو روشن کردے! اے کہ تُو نغمۂ سربستہ! مجھے مندِرِ الفت کا برہمن کردے! سنگِ اسود کو مرے  خلدِ ملامت سے نکال! اے! کہ تُو پارس ِ…Read more …