فلسفہ

falsafa


فلسفہ

افکار جوانوں کے خفي ہوں کہ جلي ہوں 
پوشيدہ نہيں مرد قلندر کي نظر سے 
معلوم ہيں مجھ کو ترے احوال کہ ميں بھي 
مدت ہوئي گزرا تھا اسي راہ گزر سے 
الفاظ کے پيچوں ميں الجھتے نہيں دانا 
غواص کو مطلب ہے صدف سے کہ گہر سے!
پيدا ہے فقط حلقہ ارباب جنوں ميں 
وہ عقل کہ پا جاتي ہے شعلے کو شرر سے 
جس معني پيچيدہ کي تصديق کرے دل 
قيمت ميں بہت بڑھ کے ہے تابندہ گہر سے 
يا مردہ ہے يا نزع کي حالت ميں گرفتار 
جو فلسفہ لکھا نہ گيا خون جگر سے ..

(اقبال)


(665)

Share it :)Share on FacebookTweet about this on TwitterGoogle+share on TumblrPin on PinterestShare on LinkedInEmail to someone

Comments

comments

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *