زندگانی ہے فقط
ایک مسافت
از قلب سدا سوز
با عقل درخشاں
کیونکہ
قلب دکھاتا ہے بہت
زندگانی
ایک مسافت پھر سے
از عقل سرد سنگ با قلب پریشاں
کیونکہ
عل
قل دکھاتی ہی نہیں
زندگانی.. 
ایک باریک سی رسی پے توازن کا گماں ہے
دو ہاتھ اور ان میں
اک عقل کا نشتر
اک قلب کا تیشہ
اور ایک ہی کرتب سے
اکتا سا گیا ہے
اس سرکس بے رنگ میں بے ہنر مداری
سینے میں کوئ بھی اترے
ہو عقل کا نشتر
..یا قلب کا تیشہ

Arqum

02/05/2017

(15)

Share it :)Share on FacebookTweet about this on TwitterGoogle+share on TumblrPin on PinterestShare on LinkedInEmail to someone

Comments

comments

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *