رخت سفر سنبھالو، جو روش ہے یاد رکھو

چلتے چلو کہ یہ بھی اک کروٹ زماں تھی

اک سال بیت جاے یا اک صدی جو سمٹے

جو ابر نہیں برستے تو انہیں سمے سے کیا ہے

چلتے چلو ابھی تو کہ وہ دشت ڈھونڈنے ہیں

کہ جہاں وہ شجر بحثیں، ہماری تشنگی کو

منزل کہاں بھلا ہے، بس ایک راستہ ہے

جو سفر ہو لامکاں کا اسکو مکاں سے کیا ہے


ارقم

31/12/2015

(74)

Share it :)Share on FacebookTweet about this on TwitterGoogle+share on TumblrPin on PinterestShare on LinkedInEmail to someone

Comments

comments

Leave a Comment

Your email address will not be published. Required fields are marked *